154

سٹی سے اورنگی ٹریک کو بحال کرکے کراچی سرکلر ریلوے آپریشن کا حصہ بنادیا گیا۔

۔کراچی:پاکستان ریلوے نے کراچی سرکلر ریلوے بحالی منصوبے پر سپریم کورٹ کے احکامات کے پیش نظر آج سٹی اسٹیشن سے اورنگی تک 14 کلومیٹر ٹریک کو سرکلر ریلوے آپریشن کا حصہ بنادیا۔ ٹرین اب اورنگی سے دابھیجی تک 74 کلومیٹر راستے تک سفری سہولت فراہم کرے گی۔ سرکلر ریلوے ون اپ روزانہ شام سوا چار بجے اورنگی اسٹیشن سے براستہ منگھوپیر، سائٹ، شاہ عبدالطیف، بلدیہ، لیاری، وزیر منشن اسٹیشن سے ہوتی ہوئی 14 کلومیٹر فاصلہ طے کر کے سٹی اسٹیشن پہنچے گی جہاں سے اپنے معمول کے مطابق مزید 60 کلومیٹر فاصلہ طے کر کے دابھیجی پہنچے گی جبکہ کے سی آر ڈاون 2 صبح سوا دس بجے اورنگی اسٹیشن پہنچے گی۔سٹی سے اورنگی تک 14 کلومیٹر ٹریک پر 12 پھاٹک اور 8 اسٹیشن ہیں۔ پاکستان ریلوے نے اورنگی سے دحابیجی تک سفری کرایہ صرف 30 روپے ہی رکھا ہے۔ ایک ٹرین پانچ کوچز پر مشتمل ہوگی جس میں مجموعی طور پر 500 مسافر سفر کر سکیں گے۔ اس موقع پر ڈویژنل سپرنٹنڈنٹ کراچی ریلوے جناب محمد حنیف گل نے لوپ لائن پر سروس بحال ہونے پر عوام کو مبارکباد دی اور کہا کہ کے سی آر کے لوپ لائن میں چلنے سے عوام کی سفری تکلیف میں کمی آئیگی۔ انہوں نے افسران، ملازمین اور ورکرز کو ٹریک بحال کرنے پر مبارکباد بھی دی۔سٹی سے اورنگی ٹریک کی بحالی کے بعد ڈی ایس کراچی محمد حنیف گل نے پی ڈی کراچی سرکلر ریلوے کے ہمراہ اورنگی سے ڈرگ روڈ تک بقایا 16 کلومیٹر لوپ لوئن کا بھی معائنہ کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں