58

کراچی کے مسائل حل کے لیے سندھ حکومت سے مکمل تعاون کریں گے، وزیر اعظم

وزیراعظم عمران خان کا کہنا ہے کہ کراچی میں بارشوں سے ہونے والی تباہی کاری اور عوام کے مسائل کے حل کے لیے وفاقی حکومت صوبائی حکومت سے مکمل تعاون کرے گی۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے قومی رابطہ کمیٹی برائے کووڈ 19 کے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔وزیراعظم نے وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ سے کراچی کے حالات پر خصوصی طور پر بات کرتے ہوئے کہا کہ کراچی میں ہونے والی تباہی اور اس کے نتیجے میں عوام کو درپیش مسائل کے حل کے سلسلے میں وفاقی حکومت صوبائی حکومت سے ہر ممکن تعاون کرے گی اور اس ضمن میں تمام وفاقی اداروں کو ہدایات جاری کر دی گئی ہیں کہ وہ ریلیف سرگرمیوں میں صوبائی حکومت کے ساتھ بھرپور تعاون کریں۔
انہوں نے کہا کہ کراچی کے مسائل کے حل کے لیے طویل المدتی پلان تشکیل دیا جا رہا ہے، وہ آئندہ چند روز میں خود کراچی جائیں گے اور حالات کا جائزہ لیں گے۔اجلاس میں محرم الحرام کے دوران کورونا کے پھیلاو¿ کو موثر طریقے سے روکنے کے لیے اقدامات، اسکولوں میں تعلیمی سرگرمیوں کی بحالی، ٹیسٹنگ، ٹریکنگ اور قرنطینہ حکمت عملی پر عملدرآمد، مختلف شعبوں خصوصاً سیاحت کے حوالے سے ٹیسٹنگ کی حکمت عملی، مائیکرو اسمارٹ لاک ڈاو¿ن اور ہوائی شعبے کے حوالے سے موجودہ حالات کو مد نظر رکھتے ہوئے حکمت عملی پر تفصیلی بریفنگ دی گئی۔
وزیر منصوبہ بندی اسد عمر نے اجلاس کو کورونا کے پھیلاو¿ کی مجموعی صورتحال کے بارے میں تفصیلی طور پر بریفنگ دی اور اس حوالے سے عالمی اور علاقائی ممالک اور پاکستان کی صورتحال کا تقابلی جائزہ پیش کیا۔اجلاس کو بتایا گیا کہ کورونا سے بچاو¿ کے خلاف حکومت پاکستان کی جانب سے اختیار کی جانے والی حکمت عملی کو عالمی سطح پر سراہا جا رہا ہے، اللہ تعالی کے فضل و کرم اور حکومتی حکمت عملی کی بدولت پاکستان میں بیرونی دنیا اور خصوصاً ہمسایہ ممالک کی نسبت کورونا کے حوالے سے حالات میں واضح بہتری پائی جاتی ہے۔اجلاس کو بتایا گیا کہ موثر اقدامات کی بدولت کورونا کے مثبت کیسز میں خاطر خواہ کمی واقع ہوئی ہے۔شرکا کو محرم الحرام کے دوران مجالس اور جلوسوں کے حوالے سے اختیار کی جانے والی حکمت عملی اور ایس او پیز پر عمل درآمد پر بھی بریف کیا گیا۔قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں بہتر حالات کے پیش نظر اسکولوں میں تعلیمی سرگرمیوں کی بحالی کے حوالے سے روڈ میپ، اسکولوں میں حفاظتی انتظامات اور ایس او پیز کے حوالے سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔
وزیر اعظم نے اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کورونا کی بہتر صورتحال پر این سی او سی، طبی شعبے سے وابستہ افراد، قانون نافذ کرنے والے اداروں، صوبائی حکومتوں اور دیگر تمام متعلقین کو مبارکباد دی اور کہا کہ موثر کوآرڈینیشن اور جامع حکمت عملی کی بدولت کورونا کے خلاف کامیابی نصیب ہوئی۔انہوں نے کہا کہ حکومتی کاوشوں اور حکمت عملی کی بدولت وبا کے پھیلاو¿ کو روکا گیا ہے۔ تاہم ابھی خطرہ موجود ہے جس کے لیے پوری قوم کا تعاون درکار ہے۔محرم الحرام کے دوران وائرس کے پھیلاو¿ کو روکنے کے ضمن میں وزیر اعظم نے ماسک و دیگر احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی ضرورت پر خاص طور پر زور دیا۔انہوں نے محرم الحرام کے دوران تعاون پر علمائے کرام، ذاکرین اور مذہبی رہنماو¿ں کی جانب سے تعاون پر خصوصی شکریہ ادا کرتے ہوئے کہا کہ مذہبی رہنماو¿ں نے کورونا کے خلاف جنگ میں جس تعاون کا مظاہرہ کیا ہے وہ لائق تحسین ہے۔اسکولوں میں تعلیمی سرگرمیاں بحال کرنے کے حوالے سے بات کرتے ہوئے وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ اس ضمن میں صوبائی حکومتوں، اسکولوں کی انتظامیہ اور دیگر متعلقین کی مشاورت سے تمام انتظامات کو حتمی شکل دی جائے تاکہ 15 ستمبر کو اسکولوں میں تعلیمی سرگرمیوں کی بحالی کے حوالے سے 7 ستمبر کے اجلاس میں حتمی فیصلہ لیا جا سکے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں