69

کراچی میں اسکول کھولنے کا آغاز، والدین احتیاط سے بچوں کو بھیجیں

کراچی میں سمیت ملک ببھر میں پیر (آج) سے اسکول کھولنے کا آغاز ہورہا ہے ، دوسری جانب ملک بھر میں فعال کورونا کیسز کی سب سے زیادہ شرح کراچی میں ہیں،ملک کے دیگر علاقوں کی طرح کراچی میں بھی ایس او پیز کی کھلی خلاف ورزی ہورہی ہے جبکہ سندھ پولیس نے بھی مبینہ طور پر بھتے وصول کرکے اپنی آنکحیں بندکرلی ہیں جس کے سبب کراچی کے مرکزی علاقوں اور مضافات میں کرونا سے بچنے کے لیے کسی قسم کی اجتیاطی تدابیر اختیار نہیں کی جارہی ہے، ماسک نہیں پہنے جارہے اور سماجی فاصلے کا بھی خیال نہیں رکھاجارہا ہے، پورے شہر میں بڑی مارکیٹوں سمیت چھوٹی دکانیں رات گئے تک کھلی رہتی ہیں بالخصوص شہر کے مضافاتی علاقے اور پیپلزپارٹی کے روایتی حلقوں گڈاپ، ملیر، کیماڑی اور لیاری وغیرہ میں گذشتہ سال سے ایس او پیز کی کھلی خلاف ورزی کی جارہی ہے، ان علاقوں میں تمام دکانیں، ریسٹورینٹس رات گئے تک کھلے رہتے ہیں، پولیس نے ان علاقوں میں کوئی دکان کبھی سیل نہیں کی، البتہ شہر کے مرکزی علاقوں ڈسٹرکٹ سینٹر اور ڈسٹرکٹ ایسٹ میں اسسٹنٹ کمشنرز کی سربراہی میں کئی مارکیٹیں اور دکانیں سیل کی جاچکی ہیں لیکن یہ کارروائی نمائشی ہوتی ہے یا مک مکا کرکے معاملہ طے پاجاتا ہے اور دکانیں دوبارہ چند دنوں کے بعد کھل جاتی ہیں جہاں ایس او پہز کی پہلے کی طرح دھجیاں بکھیری جاتی ہیں،
ماہرین کا کہنا ہے کہ کراچی شہر جس کی آبادی ساڑھے تین کروڑ ہے اور کورونا سے بچائوکے لیے کوئی اقدامات بھی نہیں اٹھائے جارہے، ایسے میں بچوں کے اسکول کھولنا بہت رسک ہے، حکومت کو چاہیے کہ ایس او پیز پر عملدرآمد کے لیے بلاتخصیص سخت اقدامات اٹھائے، اس ضمن میں پیپلزپارٹی حکومت اپنے مضبوط سیاسی حلقوں میں سخت کارروائ کرے، ایس او پیز کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف جرمانہ اور سزا کاقانون نافذ کرے، اس طرح یہ کارروائ پورے شہر میں پھیلادے ۔ انھوں نے کہا کہ اسکولوں کے کھلنے سے بچوں کی زندگیاں خطرے میں پڑگئی ہیں اور بچوں سمیت تمام شہریوں کی زندگیوں کی حفاظت کے لیے سخت اقدامات ناگزیر ہوگئے ہیں ۔اسکول انتظامیہ اور والدین کو چاہیےکہ بچوں کے معاملے میں کوئی سمجھوتہ نہیں کیا جاِئے، انھیں ماسک ضرور پہنایا جائے اور سماجی فاصلے کے تحت کلاسوں میں بیٹھایا جائے۔
اسکول کھلنے کے سوال پر شہریوں کا کہنا ہے کہ بچوں کا بہت نقصان ہوگیا ہے ماسک لگا کر بچوں کو اسکول بھیجیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں